Akhtar Sheerani

(04 May 1905 – 09 September 1948 / Tonk, Rajasthan / British India)

انانیت - Poem by Akhtar Sheerani

چھا رہی ہوں پستیوں پر دیوداروں کی طرح
اور بلندی پر عقابِ پر فشاں کی شکل میں
اک نگا ہِ بے صدا و بے نشاں کی شکل میں
سر بلندی پائی میں نے کوہساروں کی طرح
کوہساروں سے بھی برتر ابر زاروں ١ کی طرح
حدَِّ آخر میری صورت٢ آسماں کی شکل میں
عظمتوں سے کھیلتی ہوں کہکشاں کی شکل میں
خندہ زن ہوں بزمِ خاکی پر سِتاروں کی طرح
رعد کی صورت گرجتی ہوں بساطِ خاک پر
کانپ اٹھتے ہیں سمندر جس سے وہ طوفاں ہوں میں
سینہء ہستی کی اِک فکرِ شرر افشاں ہوں میں
ہیں قدم میرے زمیں پر سر مرا افلاک پر
صورتِ اندیشہ مستی میں بپھر جاتی ہوں میں
پردہ ہائے ماہ و انجم سے گذر جاتی ہوں میں


Comments about انانیت by Akhtar Sheerani

There is no comment submitted by members..



Read this poem in other languages

This poem has not been translated into any other language yet.

I would like to translate this poem »

word flags

What do you think this poem is about?



Poem Submitted: Tuesday, April 17, 2012

Poem Edited: Tuesday, April 17, 2012


[Report Error]