Zia Fatehabadi

(9 February 1913 - 19 August 1986 / Kapurthala, Punjab / India)

دنیا مری نظر سے تجھے دیکھتی رہی - Poem by Zia Fatehabadi

دنیا مری نظر سے تجھے دیکھتی رہی
پھر میرے دیکھنے میں بتا کیا کمی رہی
کیا غم اگر قرار و سکوں کی کمی رہی
خوش ہوں کہ کامیاب مری زندگی رہی
اک درد تھا جگر میں جو اٹھتا رہا مدام
اک آگ تھی کہ دل میں برابر لگی رہی
دامن دریدہ، لب پہ فگاں، آنکھ خونچکاں
گر کر تری نظر سے مری بے کسی رہی
آئی بہار، جام چلے، مے لوٹی مگر
جو تشنگی تھی مجھ کو وہی تشنگی رہی
کھوئی ہوئی تھی تیری تجلّی میں کائنات
پھر بھی مری نگاہ تجھے ڈھونڈتی رہی
جلتی رہیں امید کی شمعیں تمام رات
مایوس دل میں کچھ تو ضیاء روشنی رہی


Comments about دنیا مری نظر سے تجھے دیکھتی رہی by Zia Fatehabadi

There is no comment submitted by members..



Read this poem in other languages

This poem has not been translated into any other language yet.

I would like to translate this poem »

word flags

What do you think this poem is about?



Poem Submitted: Tuesday, April 17, 2012

Poem Edited: Tuesday, April 17, 2012


[Report Error]