Amjad Islam Amjad

(4 August 1944 / Sialkot)

سورج !تیری آگ بجھے کی کتنے پانی سے؟ - Poem by Amjad Islam Amjad

-->

سوچ رہی ہے جانے کب سے آدم کی اولاد
ایک ہی بیج سے جب یہ اتنے ڈھیروں پیڑ اُگے
ایک ہی پیڑ کی شاخ شاخ پہ مہکے جو سب پھول
ایک ہی پھول کے دامن میں جو سارے رنگ بھرے

پھر یہ کیسا فرق ہے ان میں ، کیسا ہے اُلجھاؤ
ایک ہی پھول کی ہر پتی میں دُنیا ایک نئی
ایک ہی شاخ پہ کھل اُٹھتے ہیں کیسے کیسے پھول!
ایک ہی پیڑ پہ مل جاتے ہیں باہم رنگ کئی

لیکن ان کے میل میں بھی ہے اک دوری موجود
کھا جاتے ہیں زرد سیہ کو سُرخ اور گہرے رنگ
زور آور سے دب جاتے ہیں ، جتنے ہیں کمزور
طاقت والے ہو جاتے ہیں طاقتور کے سنگ
پوچھ رہی ہے جانے کب سے آدم کی اولاد
سُکھ کا دن کب پیدا ہوگا رات کہانی سے
دھرتی! تیرا پیٹ بھرن کو کتنی مٹی ہو!
سورج تیری آگ بجھے گی کتنے پانی سے؟


Comments about سورج !تیری آگ بجھے کی کتنے پانی سے؟ by Amjad Islam Amjad

There is no comment submitted by members..



Read this poem in other languages

This poem has not been translated into any other language yet.

I would like to translate this poem »

word flags

What do you think this poem is about?



Poem Submitted: Tuesday, April 10, 2012

Poem Edited: Tuesday, April 10, 2012


[Report Error]