Khwaja Haider Ali Atish

(1778 - 1848 / Lucknow / British India)

یار کو میں مجھے یار نے سونے نہ دیا - Poem by Khwaja Haider Ali Atish


یار کو میں مجھے یار نے سونے نہ دیا
رات بھر تعلئیِ بیدار نے سونے نہ دیا

ایک شب بلبلِ بیتاب کے جاگے نہ نصیب
پہلوئے گل نے کبھی خار نے سونے نہ دیا

دردِ سر شام سے اُس زُلف کے سودے میں رہا
صبح تک مجھ کو شبِ تار نے سونے نہ دیا

رات بھر کی دلِ بیتاب نے باتیں مجھ سے
مجھ کو اس عشق کے بیمار نے سونے نہ دیا


Comments about یار کو میں مجھے یار نے سونے نہ دیا by Khwaja Haider Ali Atish

There is no comment submitted by members..



Read this poem in other languages

This poem has not been translated into any other language yet.

I would like to translate this poem »

word flags

What do you think this poem is about?



Poem Submitted: Friday, April 20, 2012

Poem Edited: Friday, April 20, 2012


[Report Error]