Tasadduq Hussain


Cheraiy Kee Jurian - Poem by Tasadduq Hussain

ذ را غور سے دیکھو اے دنیا والو
ھے چھرے کی جھریوں میں جیون کھانی
کھیں پہ لکھا ھے فسانہ الفت
کھیں پہ چْھپی ھے دکھوں کی کھانی
شب و روز اب بھی ہیں تازہ وہ یادیں
وہ بچپن کے کھیل اور جوانی کی باتیں
وہ ماں کی محبت بھری داستانیں
وہ بابا کی شفقت بھری مہربانی
بنی خود جو ممتا تو پوچھو نہ یا رو
تصور میں بھی نہ تھی یہ دل فشانی
وہ معصوم بچوں کی معصوم باتیں
وہ جیون میں خوشیوں کی اک فراوانی
جواں سال اولا د رخصت ھوٗی جب
بھرے گھر کی رونق ھوی ا نی فانی
نیا دور خشیوں کا ایا ھے گھر میں
بنی ھوں میں جب سے نانی جی نانی

(ت ح ا عجا ز)


Poet's Notes about The Poem

Its in Urdu language. Inspired by a picture of a sweet old lady with lots of wrinkles on her face and a little smile.

Comments about Cheraiy Kee Jurian by Tasadduq Hussain

There is no comment submitted by members..



Read this poem in other languages

This poem has not been translated into any other language yet.

I would like to translate this poem »

word flags

What do you think this poem is about?



Poem Submitted: Friday, April 4, 2014

Poem Edited: Friday, April 4, 2014


[Hata Bildir]