Tasadduq Hussain


Watan Kee Yaad - Poem by Tasadduq Hussain

وطن کی یاد

اے وطن پھر تیری یاد اءیِٰ ھے
کس قدر شور ھے ہنگامہ ھے رسوا ءی ھے

اج محتاج ھیں غیروں کے بقا کی خاطر
ھاتھ پھیلا ٰءَے ھیں ھر سمت گدا کی خاطر

تیرا دھکاں تیرا مزدور جفاکش اب بھی ھے
لہلہا تے ھوٰے کھیتوں کی وہ رنگت اب بھی ھے

تیرے جانباز سپاہی، وہ غازی وہ شھید
تیری عظمت کے محافظ اب بھی ھیں

تیرے کوہسار یھ دریا یھ سمندر یھ فضا
تیری عظمت کے وہ دیرینہ نشاں اب بھی ھیں

اے وطن پھر تیری قسمت میں یھ رسواٰءی کیوں
قوم کی ھمت وجرت میں یھ پسپاٰی کیوں

اے وطن پھر تیری یاد اءی ھے
دل ھے بیتاب نظر درد سے بھر آٰءی ھے

تصدق حسین اعجاز ۔۔۔۔۔۔


Comments about Watan Kee Yaad by Tasadduq Hussain

There is no comment submitted by members..



Read this poem in other languages

This poem has not been translated into any other language yet.

I would like to translate this poem »

word flags

What do you think this poem is about?



Poem Submitted: Monday, March 17, 2014

Poem Edited: Monday, March 17, 2014


[Hata Bildir]