Akhtar Sheerani

(04 May 1905 – 09 September 1948 / Tonk, Rajasthan / British India)

آنسو - Poem by Akhtar Sheerani


میرے پہلو میں جو بہہ نکلے تمہارے آنسو

دیکھ سکتا ہے بھلا کون یہ پیارے آنسو

اپنا منہ میرے گریباں میں چھپاتی کیوں ہو؟

شمع کا عکس جھلکتا ہے جو ہر آنسو میں

مینہ کی بوندوں کیطرح ہوگئے سستےکیوں آج؟

صاف اقرار محبت ہو زباں سے کیوں کر

ہجر، ابھی دُور ہے، میں پاس ہوں، اے جان وفا

صبح دم دیکھ نہ لے کوئی یہ بھیگا آنچل

اپنے دامان و گریباں کو میں کیوں پیش کروں

دم رخصت ہے قریب اے غم فرقت خوش ہو

بن گئے شام محبت کے ستارے آنسو

میری آنکھو ں میں نہ آجائیں تمہارے آنسو

دل کی دھڑکن کہیں سن لیں نہ تمہارے آنسو

بن گئے بھیگی ہوئی رات کے تارے آنسو

موتیوں سے کہیں مہنگے تھے تمہارے آنسو

آنکھ میں آگئے یوں شرم کے مارے آنسو

کیوں ہوئے جاتے ہیں بے چین تمہارے آنسو

میری چغلی کہیں کھا دیں نہ تمہارے آنسو

ہیں مرے عشق کا انعام تمہارے آنسو

کرنے والے ہیں جدائی کے اشارے آنسو

صدقے اس جان محبت کے میں اختر جس کے

رات بھر بہتے رہے شوق کے مارے آنسو


Comments about آنسو by Akhtar Sheerani

There is no comment submitted by members..



Read this poem in other languages

This poem has not been translated into any other language yet.

I would like to translate this poem »

word flags

What do you think this poem is about?



Poem Submitted: Monday, April 16, 2012

Poem Edited: Monday, April 16, 2012


[Report Error]