Josh Malihabadi

(05 December 1894 – 22 February 1982 / Malihabad, United Provinces / British India)

برسات کی رات - Poem by Josh Malihabadi

بھری برسات میں، جس وقت آدھی رات کے بادل
سیہ پرچم اُڑاتے ہیں، بُجھا کر چاند کی مشعل
مکاں کے بام و در بجلی کی رو میں جب جُھکتے ہیں
سُبک بوندوں سے دروازوں کے شیشے جب کھٹکتے ہیں
سیاہی اتنی چھا جاتی ہے جب ہستی کی محفل میں
تصوّر تک نہیں رہتا سحر کا، رات کے دل میں
ستارے دفن ہو جاتے ہیں جب آغوشِ ظُلمت میں
لپک اُٹھتا ہے اِک کوندا سا جب شاعر کی فِطرت میں
معاً اک حُور اس روزن میں آ کر مُسکراتی ہے
اِشاروں سے مُجھے اپنی گھٹاؤں میں بُلاتی ہے


Comments about برسات کی رات by Josh Malihabadi

There is no comment submitted by members..



Read this poem in other languages

This poem has not been translated into any other language yet.

I would like to translate this poem »

word flags

What do you think this poem is about?



Poem Submitted: Tuesday, April 17, 2012

Poem Edited: Tuesday, April 17, 2012


[Report Error]