Obaidullah Aleem

(1939 - 1997 / Bhopal / India)

Main Ki Kiya Kaam - Poem by Obaidullah Aleem

میں نے کیا کام لاجواب کیا
اُس کو عالم میں انتخاب کیا

کرم اُس کے ستم سے بڑھ کر تھے
آج جب بیٹھ کر حساب کیا

کیسے موتی چھپائے آنکھوں میں
ہائے کس فن کا اِکتساب کیا

کیسی مجبوریاں نصیب میں تھیں
زندگی کی کہ اِک عذاب کیا

ساتھ جب گردِ کُوئے یار رہی
ہر سفر ہم نے کامیاب کیا

کچھ ہمارے لکھے گئے قِصّے
بارے کچھ داخلِ نصاب کیا

کیا عبید اب اُسے میں دوں اِلزام
اپنا خانہ تو خود خراب کیا

Listen to this poem:

Comments about Main Ki Kiya Kaam by Obaidullah Aleem

There is no comment submitted by members..



Read this poem in other languages

This poem has not been translated into any other language yet.

I would like to translate this poem »

word flags

What do you think this poem is about?



Poem Submitted: Wednesday, May 9, 2012

Poem Edited: Wednesday, May 9, 2012


[Report Error]