Josh Malihabadi

(05 December 1894 – 22 February 1982 / Malihabad, United Provinces / British India)

قدم انساں کا راہ ِ دہر ميں تھرا ہي جاتا ہے - Poem by Josh Malihabadi

قدم انساں کا راہ ِ دہر ميں تھرا ہي جاتا ہے
چلے کتنا ہي کوئي بچ کے، ٹھوکر کھا ہي جاتا ہے

نظر ہو خواہ کتني ہي حقائق آشنا، پھر بھي
ہجوم ِ کشمکش ميں آدمي گھبرا ہي جاتا ہے

خلاف ِ مصلحت ميں بھي سمجھتا ہوں مگر ناصح
وہ آتے ہيں تو چہرے پر تحير آ ہي جاتا ہے

ہوائيں زور کتنا ہي لگائيں آندھياں بن کر
مگر جو گھر کے آتا ہے وہ بادل چھا ہي جاتا ہے

شکايت کيوں اسے کہتے ہو، يہ فطرت ہے انساں کي
مصيبت ميں خيال ِ عيش ِ رفتہ آ ہي جاتا ہے

سمجھتي ہيں مآل ِ گل مگر کيا زور ِ فطرت ہے
سحر ہوتے ہي کليوں کو تبسم آ ہي جاتا ہے


Comments about قدم انساں کا راہ ِ دہر ميں تھرا ہي جاتا ہے by Josh Malihabadi

There is no comment submitted by members..



Read this poem in other languages

This poem has not been translated into any other language yet.

I would like to translate this poem »

word flags

What do you think this poem is about?



Poem Submitted: Tuesday, April 17, 2012

Poem Edited: Tuesday, April 17, 2012


[Report Error]