Abdul Hameed Adam

(10 April 1910 - 10 March 1981 / Punjab / British India)

شام ہوتی ہے دیا جلتا ہے میخانے کا - Poem by Abdul Hameed Adam

-->

شام ہوتی ہے دیا جلتا ہے میخانے کا
کون سا باب ہے یہ زیست کے افسانے کا

عشق کے کام منظم بھی ہیں ، ہنگامی بھی
شمع اک دوسرا کردار ہے افسانے کا

بن گیا فتنۂ محشر کا اثاثہ آخر
غلغلہ میری جوانی کے بہک جانے کا

زندگی راہ نوردی سے عبارت ہے عدم
موت مفہوم ہے رستے سے گزر جانے کا


Comments about شام ہوتی ہے دیا جلتا ہے میخانے کا by Abdul Hameed Adam

There is no comment submitted by members..



Read this poem in other languages

This poem has not been translated into any other language yet.

I would like to translate this poem »

word flags

What do you think this poem is about?



Poem Submitted: Monday, April 23, 2012

Poem Edited: Monday, April 23, 2012


[Report Error]