poet Zia Fatehabadi

Zia Fatehabadi

ایذا طلبی

تجھ کو دیکھا تو تھی نظر کی خطا
آہ کھینچی تو بے قرار تھا دل
نا مراد اور سوگوار تھا دل
جو ہوا، جوش بیخودی میں ہوا
یاد آتی رہی تری شوخی
بھول کر بھی تجھے بھلا نہ سکا
بات بگڑی ہوئی بنا نہ سکا
روز و شب دل کی بیکلی نہ گئی
راز وحشت صبا نے تاڈ لیا
گل و بلبل سے کہہ دیا جا کر
اہل گلشن نے وجد میں آ کر
کہہ دیا تجھ سے ماجرا سارا
ڈر ہے، تو اب خفا نہ ہو جاۓ
درد دل کی دوا نہ ہو جاۓ

Poem Submitted: Tuesday, April 17, 2012
Poem Edited: Tuesday, April 17, 2012

Add this poem to MyPoemList

Rating Card

2,8 out of 5
24 total ratings
rate this poem

Comments about ایذا طلبی by Zia Fatehabadi

There is no comment submitted by members..



Read this poem in other languages

This poem has not been translated into any other language yet.

I would like to translate this poem »

word flags

What do you think this poem is about?