poet Zia Fatehabadi

Zia Fatehabadi

ایک لٹیرا

کس سے کھیلوں، جی بہلاؤں
اچھلوں، کودوں، ناچوں، گاؤں
ہنسوں، ہنساؤں، روؤں، رلاؤں
کیسے بگڑی بات بناؤں
ٹوٹ گیا ہے دل کا کھلونا
دل کا کھلونا ٹوٹ گیا

میں ہوں، رات ہے، تنہائی ہے
غم کی کالی گھٹا چھائی ہے
بیتے دنوں کی یاد آئی ہے
دل کی کلی پھر مرجھائی ہے
چھوٹ گیا ہے ساتھ یوگوں کا
ساتھ یوگوں کا چھوٹ گیا

یہ تو بتا، او جانے والے
میں برہن ہوں کس کے حوالے
دل میں زخم، زباں پر تالے
بھرنے کو ہیں صبر کے پیالے
پھوٹ گیا ہے ہاے نصیبا
ہاے نصیبا پھوٹ گیا

سوکھا گیا موسم ساون کا
مالا ٹوٹی، بکھرا منکا
ہوش کسے ہے اب تن من کا
نیند آنکھوں کی، سکھ جیون کا
لوٹ گیا ہے ایک لٹیرا
ایک لٹیرا لوٹ گیا

Poem Submitted: Wednesday, June 20, 2012
Poem Edited: Wednesday, June 20, 2012

Add this poem to MyPoemList

Rating Card

2,9 out of 5
18 total ratings
rate this poem

Comments about ایک لٹیرا by Zia Fatehabadi

There is no comment submitted by members..



Read this poem in other languages

This poem has not been translated into any other language yet.

I would like to translate this poem »

word flags

What do you think this poem is about?