Zia Fatehabadi

(9 February 1913 - 19 August 1986 / Kapurthala, Punjab / India)

جدائی - Poem by Zia Fatehabadi

جدائی، آہ یہ اک لفظ کتنا یاس آگئیں ہے
تصوّر اس کا امیدوں پہ پانی پھیر دیتا ہے
ہزاروں کوس اس سے منزل آرام و تسکیں ہے
جو اس سے ہو گیا واقف وہ پھر کب چین لیتا ہے
جدائی باغ کی رنگینیوں کو چھین لیتی ہے
شراب و رقص سے محروم کر دیتی ہے انساں کو
جہاں آرائیوں، خود بینیوں کو چھین لیتی ہے
چھپا دیتی ہے مایوسی کی تاریکی میں ارماں کو
یہ سب کچھ ہے، مگر مجبور ہے میرا دل محزوں
محبّت پرورش پاتی رہی ہے اس کے دامن میں
جمال دوست سے مہجور ہے میرا دل محزوں
وہ دشمن دوست تڑپایا تھا جس نے مجھ کو ساون میں
انہیں ہاتھوں میں دیدی ہے عنان آرزو میں نے
بھروسے پر خدا کے چھوڈ دی ہے جستجو میں نے


Comments about جدائی by Zia Fatehabadi

There is no comment submitted by members..



Read this poem in other languages

This poem has not been translated into any other language yet.

I would like to translate this poem »

word flags

What do you think this poem is about?



Poem Submitted: Tuesday, April 17, 2012

Poem Edited: Tuesday, April 17, 2012


[Report Error]