Zia Fatehabadi

(9 February 1913 - 19 August 1986 / Kapurthala, Punjab / India)

خود سری کا بھرم نہ کھل جاے - Poem by Zia Fatehabadi

خود سری کا بھرم نہ کھل جاے
آدمی کا بھرم نہ کھل جاے
تیرگی کا طلسم ٹوٹ گیا
روشنی کا بھرم نہ کھل جاے
موت کا راز فاش تو کر دوں
زندگی کا بھرم نہ کھل جاے
حسن مختار اور دل مجبور
عاشقی کا بھرم نہ کھل جاے
کون دیوانگی کو دے الزام
آگہی کا بھرم نہ کھل جاے
کیجے رہبروں کا کیا شکوہ
گمراہی کا بھرم نہ کھل جاے
امتحان وفا درست، مگر
جور ہی کا بھرم نہ کھل جاے
اے مغنی، غزل ضیاء کی نہ چھیڈ
شاعری کا بھرم نہ کھل جاے


Comments about خود سری کا بھرم نہ کھل جاے by Zia Fatehabadi

There is no comment submitted by members..



Read this poem in other languages

This poem has not been translated into any other language yet.

I would like to translate this poem »

word flags

What do you think this poem is about?



Poem Submitted: Tuesday, April 17, 2012

Poem Edited: Tuesday, April 17, 2012


[Report Error]