Akhtar Muslimi

Rookie - 446 Points (1/1/1928 to 25/06/1989 / Azamgarh)

نہاں ہے خوئے صیّادی ہمارے باغبانوں میں - Poem by Akhtar Muslimi

نہاں ہے خوئے صیّادی ہمارے باغبانوں میں
عنادل باغ کے غافل نہ بیٹھیں آشیانوں میں
بس اک احساس آزادی سے دل ہے مطمئن ورنہ
قفس کا رنگ پیدا ہوگیا ہے آشیانوں میں
خبر کیا تھی بہارِ گلستاں یہ دن بھی آئے گا
ستائے گی قفس کی یاد ہم کو آشیانوں میں
خدا کی شان اس پر آج ہے الزامِ غداری
ابھی کل تک جو تھا رسمِ وفا کے راز دانوں میں
ہمارا نالۂ غم آج انھیں کو ناگوارا ہے
پڑا تھا حلقۂ طاعت ہمارا جن کے کانوں میں
چمن میں ان کو وحشت ہے ہماری ہم نشینی سے
جنھیں کل تک تھا بے حد اُنس ہم سے قید خانوں میں
کوئی اس کو خزاں سمجھے کہ فصلِ گل کہے اخترؔ
نوا سنجانِ گلشن نوحہ گر ہیں گلستانوں میں

Nehan hai khoo-e-sayyadi hamare bagbanon mein
Anadil baag ke gaafil na baithein aashyanon mein
Bas ek ehsas-e-azadi se dil hai mutmain warna
Qafas ka rang paida hogaya hai aashyaon mein
Khabar kya thi baahar-e-gulsita yeh din bhi aaye ga
Satayegi qafas ki yaad humko aashyanon mein
Khuda ki shaan us par aaj hai ilzam-e-gaddari
Abhi tak jo tha rasm-e-wafa ke razdanon mein
Hamara naala-e-gam aaj unhi ko nagwara hai
Pada tha halqa-e-ta’at hamara jin ke kanon meing
Chaman mein unko wahshat hai hamari hum nasheeni se
Jinhe kal tak tha behad uns humse qaid khanon mein
Koi isko khizaan samjhe ki fasl-e-gul kahe Akhtar
Nawa sanjaan-e-gulshan noha gar hain gulsitanon mein

Topic(s) of this poem: poem

Form: Ghazal


Comments about نہاں ہے خوئے صیّادی ہمارے باغبانوں میں by Akhtar Muslimi

There is no comment submitted by members..



Read this poem in other languages

This poem has not been translated into any other language yet.

I would like to translate this poem »

word flags


Poem Submitted: Tuesday, September 8, 2015

Poem Edited: Sunday, October 4, 2015


[Report Error]