Akhtar Muslimi

Rookie - 446 Points (1/1/1928 to 25/06/1989 / Azamgarh)

اے دوست یہ باتیں تم شاید سمجھو نہ مرے سمجھانے سے - Poem by Akhtar Muslimi

اے دوست یہ باتیں تم شاید سمجھو نہ مرے سمجھانے سے
انجام محبت کا کیا ہے پوچھو یہ کسی پروانے سے
کم بخت یہ دل اُف کام پڑا مجھ کو بھی عجب دیوانے سے
سمجھے نہ کبھی سمجھانے سے بہلے نہ کبھی بہلانے سے
تنہائی میں اکثر دل سے مری اس طرح بھی باتیں ہوتی ہیں
جس طرح کرے باتیں کوئی دیوانہ کسی دیوانے سے
بے عشق تمیزِ حسن نہیں بے حسن وجودِ عشق نہیں
پیمانے کی عزت مے سے ہے اور رونق مے پیمانے سے
بربادی مجھے اپنے دل کی بے ساختہ یاد آجاتی ہے
جب بھی کبھی اختر میرا گذر ہوتا ہے کسی ویرانے سے

Ai dost yeh baatein tum shayed samjho na mere samjhane se
Anjaam mohabbat ka kya hai pucho yeh kisi parwane se
Kambakht yeh dil uf kaam pada mujh ko bhi ajab deewane se
Samjhe na kabhi samjhane se bahle na kabhi bahlane se
Tanhai mein aksar dil se meri is tarah bhi batein hoti hain
Jis tarah kare baatein koi kisi deewane se
Be ishq tameez-e-husn nahi be husn wajood-e-ishq nahi
Paimaane ki izzat mai se hai aur raunaq-e-mai paimaane se
Barbadi mujhe apne dil ki be saakhta yaad aajati hai
Jab bhi kabhi Akhtar mera guzar hota hai kisi weerane se

Topic(s) of this poem: poem


Comments about اے دوست یہ باتیں تم شاید سمجھو نہ مرے سمجھانے سے by Akhtar Muslimi

There is no comment submitted by members..



Read this poem in other languages

This poem has not been translated into any other language yet.

I would like to translate this poem »

word flags


Poem Submitted: Tuesday, September 1, 2015



[Report Error]