Akhtar Muslimi

Rookie - 446 Points (1/1/1928 to 25/06/1989 / Azamgarh)

اک حشر اضطراب سا قلب و جگر میں ہے - Poem by Akhtar Muslimi

اک حشر اضطراب سا قلب و جگر میں ہے
کیا جانے کس بلا کا اثر اس نظر میں ہے
اس پر بھی اختیار نہیں وائے بے بسی
سمجھے ہوئے تھے ہم کہ دل اپنے اثر میں ہے
جلوے تمام کون و مکاں کے سما گئے
وسعت کہاں کی میرے دلِ مختصر میں ہے
ہے دیکھنا تو دیدئہ بینا سے دیکھیے
جلوے ہیں کس کے کون یہ شمس و قمر میں ہے
ان کی نگاہِ ناز سے بھی بے نیاز ہے
سمجھے ہوئے تھے ہم کہ دل ان کے اثر میں ہے
پھر آ رہا ہے کوئی تصور میں بار بار
اخترؔ کچھ آج اور ہی عالم نظر میں ہے

Ek hashr izteraab sa qalb-o-jigar mein hai
Kya jāne kis bala ka asar is nazar mein hai
Is par bhi akhtiyar nahi waae bebasi
Samjhe hue the ham ki dil apne asar mein hai
Jalwe tamam kaun-o-makãn ke sama gaye
Wasat kahan ki mere dil-e-mukhtasar mein hai
Hai dekhna to deeda-e-beena se dekhiye
Jalwe hain kiske kaun yeh shams-o-qamar mein hai
Unki nigāhe naaz se bhi beneyaz hai
Samjhe hue the hum ki dil unke asar mein hai
Phir āraha hai koi tasawwur mein bār bār
Akhtar kuch āj aur hi alam nazar mein hai

Topic(s) of this poem: poem

Form: Ghazal


Comments about اک حشر اضطراب سا قلب و جگر میں ہے by Akhtar Muslimi

There is no comment submitted by members..



Read this poem in other languages

This poem has not been translated into any other language yet.

I would like to translate this poem »

word flags


Poem Submitted: Wednesday, September 2, 2015

Poem Edited: Wednesday, September 2, 2015


[Report Error]