Akhtar Muslimi

Rookie - 446 Points (1/1/1928 to 25/06/1989 / Azamgarh)

کیا بتائیں کتنا لطفِ زندگی پاتا ہے دل - Poem by Akhtar Muslimi

کیا بتائیں کتنا لطفِ زندگی پاتا ہے دل
جب نگاہِ ناز تیری زد پہ آجاتا ہے دل
کون ہے غم خوار اپنا شامِ غم اے بے کسی
دل کو بہلاتا ہوں میں یا مجھ کو بہلاتا ہے دل
آ کے ان کی یاد کچھ تسکین دیتی ہے مجھے
جب شبِ فرقت کی تنہائی میں گھبراتا ہے دل
ہائے وہ منظر نہ پوچھو جب بحسنِ اتفاق
ملتی ہیں نظروں سے نظریں دل سے مل جاتا ہے دل
کیوں نہ سمجھوں آپ کو میں سو بہاروں کی بہار
سامنے جب آپ آتے ہیں تو کھِل جاتا ہے دل
کوئی جادہ ہے، نہ منزل ہے، نہ کچھ قیدِ مقام
اپنی دھن میں اک طرف مجھ کو لیے جاتا ہے دل
جانے کیوں اخترؔ مری آنکھوں میں آجاتے ہیں اشک
جب وہ رنگیں داستاں ماضی کی دہراتا ہے دل


Kya bataein kitna lutfe zindagi pata hai dil
Jab nigahe naaz teri zad pe ajata hai dil
Kaun hai gamkhwar apna shaam-e-gam ai bekasi
Dil ko bahlata hun main ya mujh ko bahlata hai dil
Aake unki yaad kuch taskeen deti hai mujhe
Jab shabe furqat ki tanhai mein ghabrata hai dil
Haai woh manzar na pucho jab bahusne ittefaq
Milti hain nazron se nazrein dil se mil jata hai dil
Kyon na samjhun aapko main sau baharon ki bahar
Saamne jab aap aate hain to khil jata hai dil
Koi jadah hai, na manzil hai, na kuch qaide muqaam
Apni dhun mein ek taraf mujhko liye jata hai dil
Jaane kyon Akhtar meri aankon mein aajate hain ashk
Jab woh range daasta maazi ki duhrata hai dil

Topic(s) of this poem: poem

Form: Ghazal


Comments about کیا بتائیں کتنا لطفِ زندگی پاتا ہے دل by Akhtar Muslimi

There is no comment submitted by members..



Read this poem in other languages

This poem has not been translated into any other language yet.

I would like to translate this poem »

word flags


Poem Submitted: Tuesday, September 1, 2015



[Report Error]