Akhtar Muslimi

Rookie - 446 Points (1/1/1928 to 25/06/1989 / Azamgarh)

دل کوئی سہارا اب لے کر شرمندئہ احساں کیا ہوگا - Poem by Akhtar Muslimi

دل کوئی سہارا اب لے کر شرمندئہ احساں کیا ہوگا
اب درد ہی درماں ہے اپنا اب درد کا درماں کیا ہوگا
ہوجاتی ہے شامِ غم روشن اب میرے جگر کے داغوں سے
یہ انجمِ تاباں کیا ہوں گے یہ ماہِ درخشاں کیا ہوگا
ہوتا ہے ستم جب مجھ پہ کوئی خود عفوِ ستم کردیتا ہوں
وہ اپنی جفائے ناحق پر تا حشر پشیماں کیا ہوگا
اک بار تو ٹکرا کر دیکھو کشتی کو بھیانک موجوں سے
یوں راحتِ ساحل کے خوگر اندازئہ طوفاں کیا ہوگا
مسموم فضائے گلشن ہے پھولوں کا دریدہ دامن ہے
اس سے تو قفس ہی بہتر ہے یہ صحنِ گلستاں کیا ہوگا
ہر شاخِ چمن ہے افسردہ ہر پھول کا چہرہ پژمردہ
آغاز ہی جب ایسا ہے تو پھر انجامِ بہاراں کیا ہوگا
اے اہلِ طرب افسانئہ غم کہتا ہے غزل کے پردے میں
اک غم کا سراپا ہے اخترؔ بیچارہ غزل خواں کیا ہوگا

Dil koi sahara ab lekar sharminda-e-ehsaa kya hoga
Ab dard hi darma hai apna ab dard ka darmaa kya hoga
Ho jati hai sham-e-gam roshan ab mere jigar ke dagon se
Ye anjume tabaan kya honge ye maah-e-darakhshaa kya hoga
Hota hai sitam jab mujh pe koi khud afu-e-sitam kar deta hun
Who apni jafa-e-nahaq par ta Hashr pasheemaa kya hoga
Ek baar to takrakar dekho kashti ko bhayanak maujon se
Yun raahat-e-sahi ke khugar andaaza-e-tufaa kya hoga
Masmum fiza-e-gulshan hai phulon ka dareeda daman hai
Isse to qafas hi behtar hai yeh sehn-e-gulistaa kya hoga
Har shaakh-e-chaman hai afsurdah hai har phool ka chehra pazmarda
Aagaz hi jab aisa hai to phir anjaam-e-baharaa kya hoga
Ai ahl-e-tarab afsana-e-gam kahta hai gazal ke parde mein
Ek gam ka sarapa hai Akhtar bechara gazal khaa kya hoga

Topic(s) of this poem: poem

Form: Ghazal


Comments about دل کوئی سہارا اب لے کر شرمندئہ احساں کیا ہوگا by Akhtar Muslimi

There is no comment submitted by members..



Read this poem in other languages

This poem has not been translated into any other language yet.

I would like to translate this poem »

word flags


Poem Submitted: Tuesday, September 15, 2015



[Report Error]