Akhtar Muslimi

Rookie - 446 Points (1/1/1928 to 25/06/1989 / Azamgarh)

یہ ہمارا چمن ہے ہمارا چمن - Poem by Akhtar Muslimi

یہ ہمارا چمن ہے ہمارا چمن
رحمتِ ایزدی اس پہ سایہ فگن
نورِ شمع یقیں زینتِ انجمن
بوئے ایماں ہے پھیلی چمن در چمن
جوئے عرفاں ہے آغوش میں موجزن
یہ ہمارا چمن ہے ہمارا چمن
گود میں اس کے پلتے ہیں علم و ہنر
ہر طرف ضوفشاں اس کے شمس و قمر
اس کی مٹی سے اُگتے ہیں لعل و گہر
اس کے ذرّے ہیں صدرشک دُرِّ عدن
یہ ہمارا چمن ہے ہمارا چمن
خدمتِ خلق ہی اس کی تقدیر ہے
اس کے پیشِ نظر دیں کی تشہیر ہے
اور علومِ جدیدہ کی تطہیر ہے
اس کا مقصد ہے تجدید علمِ کہن
یہ ہمارا چمن ہے ہمارا چمن
اپنے سینوں میں رکھتے ہیں ہم ولولے
ہم سے سیکھیں چلن مشرقی منچلے
درسِ تہذیب لیں مغربی حوصلے
ہر روش اس کا گہوارۂ علم و فن
یہ ہمارا چمن ہے ہمارا چمن
زورِ باطل سے آنکھیں ملاتے ہوئے
جان دیں حق پہ ہم مسکراتے ہوئے
کانپ اُٹھے سامنے کفر آتے ہوئے
ہم سے لرزہ بر اندام ہو اہر من
یہ ہمارا چمن ہے ہمارا چمن
یہ بہاریں ہیں تعبیر خوابِ شفیعؒ
چار سو ضوفگن ماہتابِ شفیعؒ
یوں درخشاں ہوا آفتابِ شفیعؒ
شرق سے غرب تک جس کی پھیلی کرن
یہ ہمارا چمن ہے ہمارا چمن
کارفرما یہاں روحِ دینِ متیں
مرکزِ فکر اس کا کتابِ مبیں
اس کا دستور تقلید جامد نہیں
اس میں فکرِ فراہیؒ کا ہر سو چلن
یہ ہمارا چمن ہے ہمارا چمن
گوشے گوشے میں اخلاص شبلیؒ نہاں
شمعِ اقبالؒ جلوہ فگن ہے یہاں
اختر احسنؒ کا ایثار ہر سو عیاں
جس نے اس پر فدا کردیے جان و تن
یہ ہمارا چمن ہے ہمارا چمن
وہ رشیدِ فراہیؒ متاعِ گراں
جس سے سر سبز و شاداب ہے گلستاں
جس کے ایثار سے ہے بہاریں جواں
اخترِؔ مسلمی بھی ہے ننگِ چمن
یہ ہمارا چمن ہے ہمارا چمن

Yeh hamara chaman hai hamara chaman
Rahmat-e-ezdi ispe saya fegan
Noor-e-shama yaqeen zeenat-e-anjuman
Boo-e-ima hai phaili chaman dar chaman
Joo-e-irfaa hai aagosh mein mauj-e-zan
Yeh hamara chaman hai hamara chaman
Godmein iske palte hain ilm-o-hunar
Har taraf zufesha iske shams-o-qamar
Iski mitti se ugte hain laal-o-guhar
Iske zarre hain sadrashk durre adan
Yeh hamara chaman hai hamara chaman
Khidmate khalq hi iski taqdeer hai
Iske peshe nazar deen ki tatheer hai
Aur uloom-e-jadeeda ki tatheer hai
Iska maqsad hai tajdeed-e-ilm-o-kuhan
Yeh hamara chaman hai hamara chaman
Apne seenon mein rakhte hain ham walwale
Hum se seekhein chaln mashriqi manchale
Dars-e-tahzeeb lein magribi hausale
Har rawish iski gahwara-e-ilm-o-fan
Yeh hamara chaman hai hamara chaman
Zor-e-baatil se aankhein milate hue
Jaan dein haq pe hum muskurate hue
Kaanp uthe saamne kufr aate hue
Hum se larza bar andaam ho ahr-e-mann
Yeh hamara chaman hai hamara chaman
Yeh baharein hain taabeer khwabe Shafi
Chaar su zufegan maahtabe Shafi
Yun darakhshan hua aaftabe Shafi
Sharq se garb tak jiski pahili kiran
Yeh hamara chaman hai hamara chaman
Kaar farman yahan rooh-e-deen-e-mateen
Markaz-e-fikr iska kitab-e-mobeen
Iska dastur taqleed jamid nahin
Isme fikre Farahi ka har su chalan
Yeh hamara chaman hai hamara chaman
Goshe goshe mein ikhlaas Shibli nehan
Shame Iqbal jalwa figan hai yahan
Akhtar Ahsan ka isar har su ayan
Jis ne ispar fida kar diye jaan-o-tan
Yeh hamara chaman hai hamara chaman
Woh rasheede Farahi mataae giran
Jisse sarsabz-o-shadab hai gulsitan
Jis ke isaar se hain baharein jawan
Akhtar-e-Muslimi bhi hai nang-e-chaman
Yeh hamara chaman hai hamara chaman

Topic(s) of this poem: poem

Form: Ghazal


Comments about یہ ہمارا چمن ہے ہمارا چمن by Akhtar Muslimi

There is no comment submitted by members..



Read this poem in other languages

This poem has not been translated into any other language yet.

I would like to translate this poem »

word flags


Poem Submitted: Tuesday, September 1, 2015



[Report Error]