Akhtar Muslimi

Rookie - 446 Points (1/1/1928 to 25/06/1989 / Azamgarh)

ازل سے سرمشق جور پیہم خدنگ آفات کا نشانہ - Poem by Akhtar Muslimi

ازل سے سرمشق جور پیہم خدنگ آفات کا نشانہ
میں سر سے پا تک ہوں نالئہ غم سناؤں کیا عیش کا ترانہ
سنا تو میں نے بھی ہے کہ دامِ قفس کو ٹوٹے ہوا زمانہ
تمیز لیکن نہ کرسکا میں کہ یہ قفس ہے کہ آشیانہ
عجیب اُلجھن میں تو نے ڈالا مجھے اے گردشِ زمانہ
سکون ملتا نہیں قفس میں نہ راس آتا ہے آشیانہ
اگر ارادے میں پختگی ہے تو پھیر دوں گا رُخِ زمانہ
جہاں پہ یورش ہے بجلیوں کی وہیں بناؤں گا آشیانہ
مصیبتوں کے گلے عبث ہیں فضول ہے شکوئہ زمانہ
جو مجھ سے پوچھو تو میں کہوں گا کہ ہی یہ عبرت کا تازیانہ
اسیر زنداں تھے جیسے پہلے وہی ہیں حالات اب بھی لیکن
ہے فرق اتنا کہ ہم سمجھنے لگے ہیں قفس ہی کو آشیانہ
نہ مجھ کو پروا خزاں کی ہوتی نہ خوف صیؔاد و برق ہوتا
بدل لے اے کاش کوئی اپنے قفس سے میرا یہ آشیانہ
وفا تو میری سرشت میں ہے وفا پرستی شعار میرا
جفائیں تم اپنی پہلے دیکھو وفائیں میری پھر آزمانہ
ہے میرا ذوق سجود اب بے نیاز دیر و حرم سے اختر
جبیں جہاں خم کروں گا ہوگا وہیں نمودار آستانہ

Azl se sar mashq jor paiham khadang aftab ka nishana
Main sar se paa tak hun naala-e-gam sunaun kya aish ka tarana
Suna to main ne bhi hai ki daam-e-qafas ko tute hua zamana
Tameez lekin na kar saka main ki yeh qafas hai ki aashyana
Ajeeb uljhan mein tu ne daala mujhe bhi ai gardishe zamana
Sukun milta nahin qafas mein na raas aata hai ashyana
Agar iraade mein pukhtagi hai to pher dunga rukhe zamana
Jahan pe yurish hai bijliyon ki wahin banaunga aashyana
Museebaton ke gile abas hain fuzul hai shikwa-e-zamana
Jo mujhse pucho to main kaunga ki hai yeh ibrat ka tazyana
Aseer zindaan the jaise pahle wahi hain haalat ab bhi lekin
Hai farq itna ki ham samajhne lage qafas hi ko aashyana
Na mujhko parwa khizaa ki hoti na khauf sayyad wo barq hota
Badal le ai kaash koi apne qafas se mera yeh aashyana
Wafa to meri sarisht mein hai wafa parasti shuaar mera
Jafayen tum apni pahle dekho wafayen meri phir azmaana
Hai mera zauq sujud ab be neyaz der-o-haram se Akhtar
Jabeen jahan kham karunga hoga wahin numudaar aastana

Topic(s) of this poem: poem

Form: Ghazal


Comments about ازل سے سرمشق جور پیہم خدنگ آفات کا نشانہ by Akhtar Muslimi

There is no comment submitted by members..



Read this poem in other languages

This poem has not been translated into any other language yet.

I would like to translate this poem »

word flags


Poem Submitted: Wednesday, September 2, 2015

Poem Edited: Wednesday, September 2, 2015


[Report Error]