Akhtar Muslimi

Rookie - 446 Points (1/1/1928 to 25/06/1989 / Azamgarh)

اے دلِ بے خبر ابھی کیا ہے - Poem by Akhtar Muslimi

اے دلِ بے خبر ابھی کیا ہے
جانتا بھی ہے عاشقی کیا ہے
سبب جورِ بے رخی کیا ہے
کچھ کہو وجہِ برہمی کیا ہے
جانے والا چلا گیا اب تو
نگہِ شوق دیکھتی کیا ہے
یادِ مونس ہے غم گُسار ہے دل
شامِ فرقت میں بے کسی کیا ہے
جی رہا ہوں ترے بغیر مگر
اِک مصیبت ہے زندگی کیا ہے
جُز ترے کیا طلب کروں تجھ سے
مجھ کو تیرے سوا کمی کیا ہے
پَرتوِ حسن روئے دوست ہے یہ
ماہ و انجم میں روشنی کیا ہے
دوستی میرے بخت سے ہے تجھے
مجھ سے اے نیند دشمنی کیا ہے
اپنے بس ہی کی جب نہیں اخترؔ
ہائے ایسی بھی زندگی کیا ہے

Ai dile bekhabar abhi kya hai
Janta bhi hai ashqi kya hai
Sabab jor-e-berukhi kya hai
Kuch kaho wajh-e-barhami kya hai
Jaane wala chala gaya ab to
Nig-he-shauq dekhti kya hai
Yaad-e-monis hai gam gusar hai dil
Shaam-e-furqat me bekasi kya hai
Jee raha hun tere bagair magar
Ek musibat hai zindagi kya hai
Juz tere kya talab karun tujh se
Mujh ko tere sewa kami kya hai
Partawe husn roo-e-dost hai yeh
Maah-o-anjum mein roshni kya hai
Dosti mere bakht se hai tujhe
Mujh se ai neend dushmani kya hai
Apne bas hi ki jab nahi Akhtar
Hai aisi bhi zindagi kya hai

Topic(s) of this poem: poem

Form: Ghazal


Comments about اے دلِ بے خبر ابھی کیا ہے by Akhtar Muslimi

There is no comment submitted by members..



Read this poem in other languages

This poem has not been translated into any other language yet.

I would like to translate this poem »

word flags


Poem Submitted: Wednesday, September 2, 2015

Poem Edited: Wednesday, September 2, 2015


[Report Error]