Akhtar Muslimi

Rookie - 446 Points (1/1/1928 to 25/06/1989 / Azamgarh)

ہم وہ ہیں جو طلب لذتِ غم کرتے ہیں - Poem by Akhtar Muslimi

ہم وہ ہیں جو طلب لذتِ غم کرتے ہیں
تم سے کب شکوۂ بیداد و ستم کرتے ہیں
ہائے کیا ہوگا بتا اے دلِ بیداد پسند
اب ستم بھی وہ بہ اندازِ کرم کرتے ہیں
تم نہیں واقفِ آدابِ صنم اے واعظ
بُت کدے میں بھی کہیں ذکرِ حرم کرتے ہیں
ہم وفائیں بھی کریں اور خطاوار رہیں
وہ اگر ظلم بھی ڈھائیں تو کرم کرتے ہیں
اِس کو اربابِ نظر کہتے ہیں توہینِ جنوں
سختئ غم میں کہیں آنکھ بھی نم کرتے ہیں
اُس پہ سو بار کروں عزّتِ کونین نثار
ہائے وہ سر جو ترے پاؤں پہ خم کرتے ہیں
آج تک جس کو ستم کا بھی سلیقہ نہ ہوا
اخترؔ اس سے عبث امیدِ کرم کرتے ہیں

Hum woh hain jo talab lazzat-e-gam karte hain
Tum se kab shikwa-e-bedad wo sitam karte hain
Haai kya hoga bata ai dil-e-bedaad pasand
Ab sitam bhi woh ba andaaz-e-karam karte hain
Tum nahi waaqif-e-adaab-e-sanam ai waaiz
Butkade mein bhi kahin zikr-e-haram karte hain
Hum wafayein bhi karein aur khatawar rahein
Who agar zulm bhi dhayein to karam karte hain
Isko arbab-e-nazar kahte hain tauheen-e-junoo
Sakhtiy-e-gam mein kahin aankh bhi nam karte hain
Uspe sau bar karu izzat-e-konain nisar
Hai woh sar jo tere paaon pe kham karte hain
Aaj tak jisko sitam ka bhi saleeqa na hua
Akhtar usse abas ummid-e-karam karte hain

Topic(s) of this poem: poem

Form: Ghazal


Comments about ہم وہ ہیں جو طلب لذتِ غم کرتے ہیں by Akhtar Muslimi

There is no comment submitted by members..



Read this poem in other languages

This poem has not been translated into any other language yet.

I would like to translate this poem »

word flags


Poem Submitted: Wednesday, September 2, 2015

Poem Edited: Wednesday, September 2, 2015


[Report Error]