Akhtar Muslimi

Rookie - 446 Points (1/1/1928 to 25/06/1989 / Azamgarh)

جبیں اپنی کہیں خم ہو نہ جائے - Poem by Akhtar Muslimi

جبیں اپنی کہیں خم ہو نہ جائے
مزاجِ حسن برہم ہو نہ جائے
بجھا تو دی مری شمعِ تمنا
چراغِ زیست مدھم ہو نہ جائے
سنا تو دوں تمھیں افسانئہ غم
تمھاری آنکھ پُرنم ہو نہ جائے
نہ دیکھو یوں محبت کی نظر سے
یہ امرِت ہی مجھے سم ہو نہ جائے
زمانہ کے تلوّن کو تو سمجھو
مسرت ہی کہیں غم ہو نہ جائے
ہے تعمیرِ حیات اخترؔ اسی سے
یہ دردِ دل کہیں کم ہو نہ جائے

Jabeen apni kahin kham ho na jaye
Mizaj-e-husn barham ho na jaye
Bhuja to di meri sham-e-tamanna
Chirag-e-zeest madham ho na jaye
Suna to du tumhe afsaana-e-gam
Tumhari aankh purnam ho na jaye
Na dekho yun mohabbat ki nazar se
Yeh amrit hi mujhe sam ho na jaye
Zamana ke talawwun ko to samjho
Musarrat hi kahin gam ho na jaye
Hai taamer-e-hayat Akhtar isi se
Yeh dard-e-dil kahin kam ho na jaye

Topic(s) of this poem: poem

Form: Ghazal


Comments about جبیں اپنی کہیں خم ہو نہ جائے by Akhtar Muslimi

There is no comment submitted by members..



Read this poem in other languages

This poem has not been translated into any other language yet.

I would like to translate this poem »

word flags


Poem Submitted: Tuesday, September 8, 2015



[Report Error]