Akhtar Muslimi

Rookie - 446 Points (1/1/1928 to 25/06/1989 / Azamgarh)

آئینِ جفا ان کا سمجھے تھے نہ ہم پہلے - Poem by Akhtar Muslimi

آئینِ جفا ان کا سمجھے تھے نہ ہم پہلے
ہوتا ہے ستم پیچھے کرتے ہیں کرم پہلے
کیوں سیرِ گلستاں پر ہے چیں بجبیں کوئی
زنداں میں بھی رکّھا تھا میں نے ہی قدم پہلے
آباد رہیں دونوں بُت خانہ بھی کعبہ بھی
یہ بات نہ تھی تم میں اے شیخِ حرم پہلے
ہنستے ہیں گلستاں میں پھر جا کے کہیں غنچے
کرتی ہے دعا شبنم بادیدئہ نم پہلے
ہوتی نہ اگر کُلفت کیا لطف تھا راحت میں
رہتی ہے مسرّت بھی منّت کشِ غم پہلے
کوشاں ہیں نکلنے کو یوں جاں بھی تمنّا بھی
وہ کہتی ہے ہم پہلے یہ کہتی ہے ہم پہلے
ہے نورِ حقیقت کا جویا تو مگر زاہد
اس راہ میں ملتے ہیں انوارِ صنم پہلے
برہم انھیں کرنے کو مجرم مری آنکھیں ہیں
کچھ کہہ نہ سکا ان سے یہ ہوگئیں نم پہلے
بخشا ہے محبت نے کچھ رنگِ اثر شاید
تھا تم میں کہاں اخترؔ یہ زورِ قلم پہلے

Aaeen-e-jafa unka samjhe the na ham pahle
Hota hai sitam peeche karte hain karam pahle
Kyon ser-e-gulistaan par hai chee bajabeen koi
Zindaan mein bhi rakkha tha main ne hi qadam pahle
Aabad rahein dono butkhana bhi kaaba bhi
Yeh baat na thi tumme ai Shaikh-e-Haram pahle
Haste hain gulistaan mein phir jaa ke kahin gunche
Karti hai dua shabnam badeeda-e-nam pahle
Hoti na agar kulfat kya lutf tha raahat mein
Rahti hai musarrat bhi mannat kashe gam pahle
Koshaan hain niklane ko yun jaan bhi tamanna bhi
Woh kahti hai hum pahle yeh kahti hai hum pahle
Hai noor-e-haqeeqat ka joya to magar zahid
Is raah mein milte hain anwaar-e-sanam pahle
Barham unhe karne ko mujrim meri aankhein hain
Kuch kah na saka unse yeh hogayin nam pahle
Bakhsha hai mohabbat ne kuch rang-e-asar shayed
Tha tumme kahan Akhtar yeh zor-e-qalam pahle

Topic(s) of this poem: poem

Form: Ghazal


Comments about آئینِ جفا ان کا سمجھے تھے نہ ہم پہلے by Akhtar Muslimi

There is no comment submitted by members..



Read this poem in other languages

This poem has not been translated into any other language yet.

I would like to translate this poem »

word flags


Poem Submitted: Tuesday, September 8, 2015



[Report Error]