Menu
Sunday, December 23, 2018

دسمبر

کرچیاں بدن کی کر کے
دسمبر اورحواری اس کے
راتیں دلکش کر دیتے ہیں
خوف افزا بھی ساتھ ساتھ
ٹھٹھری جرس اب روتی ہے
دردسے پکارتی بھی ہے
سوچ بھی تو بد قسمتی کی گہرائی ناپتی ہے
بر لب زہر بھرے لہجے ہیں
روح کو بہا لےجائیں گے
ٓٓآسمان غم کی جانب
موت سے ملانے کو
دسمبر اور حواری اس کے
This is a translation of the poem December by akram saqib
Topic(s) of this poem: december
READ THIS POEM IN OTHER LANGUAGES
COMMENTS

Annabel Lee

Delivering Poems Around The World

Poems are the property of their respective owners. All information has been reproduced here for educational and informational purposes to benefit site visitors, and is provided at no charge...

1/20/2021 3:10:00 PM # 1.0.0.407