Mazloom Gill

Silver Star - 3,436 Points (Born in punjab pakistan.)

مقدس - Poem by Mazloom Gill

امید تکیہ جن پر بھی کیا جائے
وہی عام سے پھر خاص ھوا جائے
پھر پتے دیں گے آسرا کب تلک
وہی خاص سے پھر عام ھوا جائے
وہی چھوڑے ھے بیچ منجدھار میں
جس پر بھی امید و تکیہ کیا جائے
ھر شخص محدود اپنی ھستی تک
کیوں کسی کا پھر گلہ کیا جائے؟
وھی ہی بنتا ھے آسرا یہاں پر
مفاد جب تک نہ منسلک کیا جائے
کون کہے کہ رشتے مقدس ھیں
جب دولت پہ اعتماد کیا جائے
اعتماد کی فضاء ھوئی ھے ختم
جب ھر طرف میل بلیک کیا جائے
جو روئے خلوص کا رونا یہاں
ایسے شعر خواں کو غرقاب کیا جائے

Topic(s) of this poem: poem

Form: ABC


Comments about مقدس by Mazloom Gill

  • Jazib Kamalvi (5/25/2017 12:48:00 AM)


    Optimism is the only key. Thanks (Report) Reply

    0 person liked.
    0 person did not like.
Read all 1 comments »



Read this poem in other languages

This poem has not been translated into any other language yet.

I would like to translate this poem »

word flags


Poem Submitted: Wednesday, May 24, 2017

Poem Edited: Friday, May 26, 2017


[Report Error]