Ravinder Kumar Soni

Gold Star - 7,785 Points (05/04/1944 / Delhi)

Miri Hasti Hi Kya Hai - Poem by Ravinder Kumar Soni

میری ہستی ہی کیا ہے ، میں نہیں ہوں
مجھے اِتنا پتا ہے، میں نہیں ہوں

نہیں ہوں میں تِری دنیا میں پھر بھی
وہی مشقِ جفا ہے، میں نہیں ہوں

غمِ ہستی کا ہو کر رہ گیا ہوں
بس اب میرا خُدا ہے، میں نہیں ہوں

لگاتا ہے جو کشتی کو کِنارے
خدا یا نا خدا ہے، میں نہیں ہوں

اِک آہِ گرم سے گردوں کو پھونکا
یہ میرا حوصلہ ہے، میں نہیں ہوں

mirii hastii hii kyaa hai, mai.n nahii.n huu.n
mujhe itanaa pataa hai, mai.n nahii.n huu.n
nahii huu.n mai.n tirii duniyaa meñ phir kyuu.n
vahii mashq e jafaa hai, mai.n nahii.n huu.n
g̣ham e hastii kaa ho kar reh gayaa huu.n
bas ab meraa ḳhudaa hai, mai.n nahii.n huu.n
lagaatā hai jo kashtii ko kinaare
ḳhudaa yaa naa ḳhudaa hai, mai.n nahii.n huu.n
ik aah e garm se garduu.n ko phoonkaa
ye meraa hosalaa hai, mai.n nahii.n huu.n

Topic(s) of this poem: love and life


Comments about Miri Hasti Hi Kya Hai by Ravinder Kumar Soni

There is no comment submitted by members..



Read this poem in other languages

This poem has not been translated into any other language yet.

I would like to translate this poem »

word flags


Poem Submitted: Wednesday, November 25, 2015

Poem Edited: Friday, December 2, 2016


[Report Error]