Ravinder Kumar Soni

Gold Star - 12,150 Points (05/04/1944 / Delhi)

Qaafilaa - Poem by Ravinder Kumar Soni

قافلہ وقت کا ویسے تو ٹھہرتا ہی نہیں
اور ٹھہرتا ہے تو اِتہاس بنا جاتا ہے
فرق نیکی و بدی کا وہ مِٹا جاتا ہے
کِس نے دیکھے ہیں بہاروں میں خزاں کے تیور
کِس نے جانا ہے ہستی ہی ہے دراصل اجل
بے سبب کون بناتا ہے یہاں تاج محل
ہم پہنچ جاتے تھے دریاؤں کی گہرائی تک
ہم نے چاہا تھا اندھیروں میں اُجالا کرنا
ہم نے چاہا تھا زمانے کو دِکھا دیں جوہر
واۓ قسمت کہ حقیقت کی زُباں کھُل نہ سکی
لفظِ اُمید کے مفہوُم سے محروُم رہے
'نہ ہوُا پر نہ ہوُا میر کا انداز نصیب
ذوق یاروں نے بہت زور غزل میں مارا'
ہاتھ میں کاتبِ تقدیر کے خوں روتا رہا
وہ قلم جس نے غمِ دل کو جِلا بخشی تھی

qaafilaa waqt kaa vaise to thahartaa hii nahii.n
aur thahartaa hai to itihaas banaa jaataa hai
farq nekii o badii kaa voh mitaa jaataa hai
kis ne dekhe hai.n bahaaro.n men ḳhizaa.n ke tevar
kis ne jaanaa hai ki hastii hii hai dar asl ajal
be sabab koun banaatā hai yahaa.n taaj mahal
ham pahunch jaate the dariyaao.n kii gaharaaii tak
ham ne chaahā thaa andhero.n meñ ujaalā karanaa
ham ne chaaha thaa zamaane ko dikhaa de.n johar
vaae qismat ki haqeeqat ki zubaa.n ḳhul naa sakii
lafz e ummeed ke mafahuum se maharuum rahe
"naa huaa par naa huaa Mir kaa andaaz naseeb
Zouq yaaro.n ne bahut zor ghazal meñ maaraa "
haath meñ kaatib e taqdeer ke ḳhuu.n rotaa rahaa
voh qalam jis ko g̣ham e dil ne jilaa baḳhashii thii

Topic(s) of this poem: life


Comments about Qaafilaa by Ravinder Kumar Soni

There is no comment submitted by members..



Read this poem in other languages

This poem has not been translated into any other language yet.

I would like to translate this poem »

word flags


Poem Submitted: Saturday, November 28, 2015

Poem Edited: Friday, December 2, 2016


[Report Error]